Home / News / کاشتکار دھان کی فصل سے جڑی بوٹیوں کی تلفی کیلئے مناسب زہرکا سپرے بوائی کے 18تا 22 دن کے بعدکھیت کی تر وتر حالت میں کریں ، مہر عابد حسین

کاشتکار دھان کی فصل سے جڑی بوٹیوں کی تلفی کیلئے مناسب زہرکا سپرے بوائی کے 18تا 22 دن کے بعدکھیت کی تر وتر حالت میں کریں ، مہر عابد حسین

مظفرگڑھ(مظفر گڑھ ڈاٹ سٹی۔ 14 جولائی۔2015ء)کاشتکار دھان کی فصل سے جڑی بوٹیوں کی تلفی کیلئے مناسب زہرکا سپرے بوائی کے 18تا 22 دن کے بعدکھیت کی تر وتر حالت میں کریں ۔مناسب زہر سے7سے15 دن کے اندر جڑی بوٹیوں تلف ہو جاتی ہیں۔اگرپہلے سپرے سے جڑی بوٹیوں کی مکمل تلفی نہ ہو تو 40 دن کے اندر دوبارہ سپرے کریں۔ان خیالات کا اظہار مہر عابد حسین ڈسٹرکٹ آفیسر زراعت توسیع مظفر گڑھ نے کاشتکاروں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ سپرے کھڑے پانی میں نہیں بلکہ زمین کی تروتر حالت میں کیا جائے ۔انہوں نے مزید کہا کہ سپرے کے 24تا36 گھنٹے کے بعد کھیت کو دوبارہ پانی ضرور لگائیں تاکہ زہر اپنا اثر اچھی طرح کر سکے۔ سپرے کرتے وقت اس بات کا خیال رکھیں کہ سپرے کے دوران کھیت میں کوئی جگہ خالی نہ رہے ورنہ اس جگہ پر جڑی بوٹیاں تلف نہیں ہوں گی اور بعد میں کنٹرول بھی مشکل ہوگا۔مہر عابد حسین نے کہا کہ کاشتکاردھان کی فصل کی بیج سے براہ راست کاشت میں جڑی بوٹیوں کے تدارک پر خصوصی توجہ دیں۔دھان کے خشک کھیت میں جڑی بوٹیوں کا کنٹرول ہی کامیاب فصل اور بہترین پیداوار کا ضامن ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس طریقہ کاشت میں جڑی بوٹیوں کی وجہ سے پیداوار میں نقصان عام کاشت کی نسبت زیادہ اور جڑی بوٹیوں کو کنٹرول کرنے کے مواقع بھی محدود ہوتے ہیں ۔ڈسٹرکٹ آفیسر زراعت نے کہا کہ فصل کی بڑھوتری کے ابتدائی مراحل میں کھیت میں جڑی بوٹیوں کے اگاوٴاور نشونما کے لئے حالات ساز گار ہوتے ہیں اسلئے ان کے کنٹرول کے لئے زیادہ توجہ درکار ہوتی ہے۔انہوں نے کہا کہ دھان کی فصل میں عام طور پر تین طرح کی جڑی بوٹیاں یعنی چوڑے پتوں والی ( مرچ بوٹی، کتا کمی، چو پتی) ڈیلا اور اس کا خاندان ( گھوئیں ، بوئیں، مورک) اور گھاس والی ( نڑو، ڈھڈن، سانکی، کلر گھاس ، کمبل) عام طور پر پائی جاتی ہیں۔ یہ جڑی بوٹیاں پیداوار کا تقریبا 25تا50فیصد تک نقصان کرتی ہیں۔

Loading...
%d bloggers like this: